مجھ کو تیرے عتاب نے مارا
یا مرے اضطراب نے مارا

بزمِ مے میں بس ایک میں محروم
آپ کے اجتناب نے مارا

خوں کیوں کر مرا کھلےکہ مجھے
ایک سراپا حجاب نے مارا

جبہ سائ کا بھی نہیں مقدور
ان کی عالی جناب نے مارا

لب مے گوں پہ جان دیتے ہیں
ہمیں شوقِ شراب نے مارا

کس پہ مرتے ہو آپ پوچھتے ہیں
مجھے فکرِ جواب نے مارا

یوں کبھی نوجواں نہ مرتا میں
تیرے عہدِ شباب نے مارا

مومن

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s