ترے غم کو جاں کی تلاش تھی ترے جاں نثار چلے گۓ
تری رہ میں کرتے تھے سر طلب، سرِ رہگزار چلے گۓ

تری کج ادائ سے ہار کے شبِ انتظار چلی گئ
مرے ضبطِ حال سے رُوٹھ کر مرے غم گسار چلے گۓ

نہ سوالِ وصل، نہ عرضِ غم، نہ حکایتیں نہ شکایتیں
ترے عہد میں دلِ زار کے سب اختیار چلے گۓ

یہ ہمیں تھے جن کے لباس پر سرِ رہ سیاہی لکھی گئ
یہی داغ تھے جو سجا کے ہم سرِ بزمِ یار چلے گۓ

نہ رہا جنونِ رخِ وفا، یہ رسن یہ دار کرو گے کیا
جنہیں جرمِ عشق پہ ناز تھا وہ گنہگار چلے گۓ

فیض احمد فیض

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s